Author Topic: آشناء راز  (Read 247 times)

0 Members and 1 Guest are viewing this topic.

Offline Master Mind

  • 4u
  • Administrator
  • *
  • Posts: 4468
  • Reputation: 85
  • Gender: Male
  • Hum Sab Ek Hin
    • Dilse
    • Email
آشناء راز
« on: May 15, 2011, 10:13 PM »
آشناء راز 
     تحریر:۔ راجا رشید محمود

تاریخ تصوف کی ترسی ہوئی خشک زمین پر تذکرہ نویسی کا چھڑکاؤ تو ہوتا رہا ہے۔ تحقیق و تصنیف کا ترشح اس کے چہرے پر چھینٹے ڈالتا رہا لیکن سحاب اخلاص نے عبدالنبی المختار حضرت خواجہ محمدیار فریدی رحمتہ اللہ علیہ سے پہلے اس دھرتی کو محبت کی آواز اور عقیدت کے سروں میں یوں جل تھل نہ کیا تھا' عقیدت و ارادت کا بادل پہلے یوں کھل کر نہ برسا تھا۔ اور تاریخ تصوف کی زمین اس سج دھج سے سیراب نہ ہوئی تھی۔ جس طرح زبان اور دل کی ہم زبانی سے سلطان الکاملین  حضرت خواجہ محمدیار فریدی رحمتہ اللہ علیہ نے وحدت الوجود کو سامعین کے وجود میں رچا بسا دیا اور شعر سخن کےآہنگ میں اس ادق فلسفے کی تشریح کی' وہ اپنے طرز کی پہلی مثال ہے۔ وحدت الوجود ہم عامیوں کے فہم و ذکا سے ارفع بات تھی۔ تصنیف و تالیف کی دھرتی میں روحانی و طریقت کی تخم ریزی بہت ہوئی' بڑے قدر آور بوٹے اور سربکف درخت پیدا ہوئے اور ان کی تعلیمات کی گھنی چھاؤں میں ابن آدم نے سکھ کا سانس لیا۔ انسانیت کے تھکے ہارے قافلے یہاں سستا کر منازل زیست کی طرف بڑھتے رہے۔ یعنی منزلوں پر منزلیں مارتے ہوئے یہاں تک پہنچتے تو اپنے منتہائے مقصود کو پا لینے کے بعد انھی درختانِ سبز میں سے کسی کے سائے میں زندگی گزار دیتے۔۔۔۔۔۔۔۔ مگر " ہمہ اوست" کے حوالے سے ان درختوں پر گل ہائے تقریر اور اثمار گفتگو کی کمی رہی۔ کتابوں کی دنیا میں وحدت الوجود کا چرچا رہا لیکن عامی اس فلسفے کی تہ تک نہ اتر سکے فتوحات مکیہ سے لے کر الروض المجود تک کا علم انہیں مرعوب تو کرتا رہا' مرغوب نہ ہوا۔ یہ سعادت برہان محبت نبوی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم حضرت خواجہ محمد یار فریدی رحمتہ اللہ علیہ کے حصے میں آئی کہ انہوں نے عامتہ الناس کی زبان میں بات کی اور فتوحات مکیہ کے ادق مقامات اور وحدت الوجود کی شرح میں تحریر کی گئی دوسری تصانیف کے سنگلاخ نکات کو اپنی زبان فیض ترجمان میں پانی کر دیا۔ وحدت الوجود کو عوام کی سمجھ کےمطابق پیش کرنا اور ہر کسی کو کسی نہ کسی حد تک اس کے معانی و مفاہیم تک رسا کرنا حضرت خواجہ محمد یار فریدی رحمتہ اللہ علیہ قدس سرہ کے سوا کسی کا منصب نہ ہوا۔
 Image
     ایں سعادت بزور بازو  نیست
 تانہ   بخشد   خدائے   بخشندہ   
 Image
گلشن تصوف میں فلسفوں اور نظریوں کےپھولوں کی جتنی قسمیں سامنے آئیں  ان کے رنگوں' ان کی خوشبووں کے تخصص اور پودوں کی جزئیات کے متعلق جتنی رہنمائی کی گئی تھی۔۔۔ سچی بات یہ ہے کہ ہم اس سے معطرو معنبر رہتے تھے' اسی کے زیر اثر معصیت کے ٹوکرے اور حرص ہوا کی گٹھڑیاں ہم نے اپنے سروں سے اتار پھینکیں! معرف الہٰی اور عرفان نفس کے وسیلے یہی تو ہیں۔ مگر فلسفی وحدت الوجود کے جن پھولوں کی طرف ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ حضرت خواجہ محمد یار فریدی رحمتہ اللہ علیہ کے دم قدم سے متوجہ ہوئی' انہوں نے مشام جاں کو معطر کر دیا۔ اس ۔۔۔۔۔۔ کی طرف جس نے دست طلب بڑھایا نور کے دھاروں کے ۔۔۔۔۔۔۔ ہو گیا۔ مفاہیم و معانی کی روشنی کا یہ جھرنا سرمدی ہے۔
حضرت خواجہ محمد یار فریدی رحمتہ اللہ علیہ نور اللہ مرقدہ حمد کہتے ہیں جو جس کی حمد کرتے ہیں وہ محمدصلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ہوتے ہیں۔ وہ نعت کہتے ہیں تو بات خدا وند عظیم و کریم تک جا پہنچتی ہے۔ وہ اپنی شیریں گفتاری کا سبب مدح و حمد کو قرار دیتے ہیں۔
 Image
    ارچہ  بیکارم'  بکر  دم کار   را
صد  ہزار  الحمد  آں  دلدار  را
 تا  ثنا خوان  محمد  گشتہ   ام
رشک  می  آید  بمن  ابرار  را   
     گرچہ حسان نیستم سحبان نیم
مدح  او شیریں کند گفتار   را
 Image
مصطفیٰ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو دیکھنا اور خدا کو پانا کیسا ہے۔ ملاحظہ فرمائیے۔
 Image
 مصطفٰی        دیدم       خدارا        یافتم
مبدا   و ہم    منتہی    را یا        ۔۔۔۔۔۔۔۔
یکے بینم خدا و مصطفٰی را' فاش می گویم
کہ بیروں رفتہ ام زا قلیم فرق و امتیاز ایں۔۔۔۔
 Image
              دونوں     جہاں کی نعمتیں کافور  ہوگئیں
اٹھی  رخ  جمال  سے  چلمن  جو  میم  کی
 Image
حقیقت  محمد  دی  پا کوئی  نئیں   سگدا
ایتھاں چپ دی جا ہے الا کوئی نئیں سگدا
محمد  دی صورت   ہے  صورت  خدا   دی
مرے  دل   توں نقشہ مٹا کوئی نئیں سگدا 
 Image
حضرت خواجہ محمد یار فریدی رحمتہ اللہ علیہ  محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اور حمد الٰہ یں ہمیشہ تر زبان دکھائی دیتے ہیں۔ اور اس نکتے میں وحدت الوجود کو بیان کرتے نظر آتے ہیں۔
 Image
شد   عمر محمد ہمہ در حمد محمد
الحمد کہ در حمد الہ است زباں۔۔۔۔۔
 Image
     خدا کوں ڈٹھوسے محمد دے اوہلے
 محمد کو ڈہنڈیں ڈکھینڈیں گزر گئ   
 Image
 اتھاں خود عبد  سڈویندے  اتھاں حق نال مل ویندے
 دماغیں  کوں چکر  ڈینڈے ہے الٹی چال کیا پچھدیں
 Image
 او لاچار تھی تے اناالحق الیندے
جیکوں  راز  اپنا  ڈسیندے محمد
 Image
حجۃ العارفین حضرت خواجہ محمد یار فریدی رحمتہ اللہ علیہ نے جیسا کہ پہلے عرض کیا جا چکا ہے فلسفہ وحدت الوجود کو تقریر میں بھی قابل فہم بنا دیا اور شعر و سخن میں بھی سہل ممتنع بنا دیا۔ فرماتے ہیں
 Image
در پنج وقت جانب کعبہ است سجدہ
در  ہر  زماں  بہ  سوئے  محمد نماز
ہر    کسے    دارد    تمنائے   دگر
دین        و       ایمانم      تمانے
منکران   مشرب      توحید    حق
غافلنداز        لا             و الائے
مصطفٰی    دانند    فرق       برق
ہا     بر فرق         اعدائے     نبی
دیں   دعو   محمد   کے       میرا
سوز        و گداز      کیا    جانیں
 Image
ہمارے ممدوح حسن سرکار علیہ الصلوۃ والسلام کی تعریف و ثنا میں تر زبانی کرتے ہیں تو اپنے دل سے قلم ترشواتے ہیں۔
 Image
از قد او قدم ترا شیدند
ازید او کرم ترا شید ند
بہر تحری قصہ حسنش
از دل ما قلم ترا شید ند
 Image
 Image
ز تحت   الثری   تا   سر  عرش اعظم
چلو   دیکھ  لو  جلوہ  ہائے  محمد
قمر چیر  ڈالا'    کیا     موم      پتھر
زہے   قوت   دست   و  پائے محمد
۔۔۔۔ قبلہ جاں صورت زیبائے محمد
شد کعبہ دل نقش کف پائے محمد
قامت   اوہست   قیامت   بقیامتہ
قربان   بقیام   قد   بالائے   محمد
 Image
جن لوگوں نے حضرت قبلہ خواجہ محمدیار فریدی رحمتہ اللہ علیہ قدس سرہ السامی کی تقاریر سنی ہیں وہ زبان میں جادو کے مفہوم سے آگاہ ہو چکے ہیں۔ مخالفین نے بھی اس حقیقت کو تسلیم کیا ہے کہ حضرت خواجہ صاحب رحمتہ اللہ علیہ کی تقریر کا جادو سر چرح کر بولتا تھا۔ ان کے حضور سننے والوں کے سر نیاز خم ہو کر رہتے تھے۔ خود فرماتے ہیں۔
 Image
سجدہ  من فرض شد بر جملہ
نقش  پائے  مصطفایم  کیستم
 Image

اور آقا حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے اپنی اس نسبت کے قدیمی ہونے کا اعلان یوں کرتے ہیں ۔
 Image
اے خاص قدیمی بردی ہے
اے کتڑی تیڈے در دی ہے
اے کٹھڑی تیغ نظر دی ہے
ہے روز ازل دی اج دی نئیں