Author Topic: اک جھلک آج دکھا گنبد خضرا کے مکیں  (Read 205 times)

0 Members and 1 Guest are viewing this topic.

Offline OLD MEN

  • Full Member
  • *
  • Posts: 396
  • Reputation: 0
  • Gender: Male
اک جھلک آج دکھا گنبد خضرا کے مکیں
کچھ بھی ہے دور سے دیدار کو آے ہوے ہیں
سر پر رکھ دیجیے ذرا دستے تسلی آقا
غم کے مارے ہیں زمانے کے ستاے ہوے ہیں
قبر کی نیند سے اٹھنا کوئی آسان نہ تھا
ہم تو محشر میں انھیں دیکھنے آے ہوے ہیں
صداے صور سے میں حشر میں نہ اٹھوں گا
کسی سنی ہوئی آواز سے پکار مجھے