Author Topic: نہ من بیہودہ گردِ کوچہ و بازار می گردَم  (Read 133 times)

0 Members and 1 Guest are viewing this topic.

Offline Ajnabi

  • Super Moderator
  • *
  • Posts: 3063
  • Reputation: 148
  • Gender: Male

مذاقِ عاشقی دارم، پئے دیدار می گردَم

میں کُوچہ بازار میں یونہی آوارہ اور بے وجہ نہیں گھومتا
بلکہ میں عاشقی کا ذوق و شوق رکھتا ہوں اور یہ سب
کچھ محبوب کے دیدار کے واسطے ہے۔

خدایا رحم کُن بر من، پریشاں وار می گردم
خطا کارم گنہگارم، بہ حالِ زار می گردم

اے خدا مجھ پر رحم کر کہ میں پریشان حال پھرتا ہوں
خطار کار ہوں، گنہگار ہوں اور اپنے
اس حالِ زار کی وجہ سے ہی گردش میں ہوں۔

شرابِ شوق می نوشم، بہ گردِ یار می گردم
سخن مستانہ می گویم، ولے ہشیار می گردم

میں شرابِ شوق پیتا ہوں اور دوست کے گرد گھومتا ہوں
میں اگرچہ شرابِ شوق کی وجہ سے مستانہ وار کلام کرتا ہوں
لیکن دوست کے گرد طواف ہوشیاری سے کرتا ہوں
یعنی یہ ہوش ہیں کہ کس کے گرد گھوم رہا ہوں۔

گہے خندم گہے گریم، گہے اُفتم گہے خیزم
مسیحا در دلم پیدا و من بیمار می گردم

اس شعر میں ایک بیمار کی کیفیات بیان کی ہیں جو بیم و رجا میں الجھا ہوا ہوتا ہے

کہ کبھی ہنستا ہوں، کبھی روتا ہوں، کبھی گرتا ہوں اور کبھی اٹھ کھڑا ہوتا ہوں

اور ان کیفیات کو گھومنے سے تشبیہ دی ہے کہ میرے دل میں

مسیحا پیدا ہو گیا ہے اور میں بیمار اسکے گرد گھومتا ہوں۔

دل کو مرکز قرار دے کر اور اس میں ایک مسیحا بٹھا کر، بیمار اسکا طواف کرتا ہے۔

بیا جاناں عنایت کُن تو مولانائے رُومی را
غلامِ شمس تبریزم، قلندر وار می گردم

اے جاناں آ جا اور مجھ رومی پر عنایت کر، کہ میں شمس تبریز کا غلام ہوں اور دیدار کے

واسطے قلندر وار گھوم رہا ہوں۔ اس زمانے میں ان سب صوفیا کو قلندر کہا جاتا تھا

جو ہر وقت سفر یا گردش میں رہتے تھے۔
[/color]